آپ یہاں ہیں
صفحہ اول > اعلانات/ متفرقات > بھولی بسری تجویز

بھولی بسری تجویز

بہت پرانے زمانے کی بات ہے، ایک آدمی نے اپنے ساتھیوں کو ایک ایسی تجویز دی جس سے تقریبا سبھی نے اتفاق کیا اور اس تجویز کو عملی جامہ پہنچانے کے لیے کافی لوگ آگے آئے اور اپنا اپنا حصہ شامل کیا۔ لیکن جیسے جیسے وقت گزرتا گیا، وہ تجویز کہیں پیچھے رہ گئی اور لوگ اُسے تقریبا بھول بھال گئے۔۔۔۔ سنیں صاحب! اِسے کہانی سمجھ کر نظر انداز نہ کریں۔۔۔ کیوں کہ ہمیں بھولی بسری تجویز دوبارہ یاد آگئی ہے۔

جانتے ہیں وہ تجویز دینے والا کون تھا؟ اس کا نام تھا، محمد علی مکی۔ اور وہ تجویز جسے مقبولیت حاصل ہوئی، وہ “ایک بلاگر ایک کتاب“ کے نام سے جانی گئی جسے اب کافی دوست احباب بھلائے بیٹھے ہیں۔ ذرا ایک نظر دیکھیں تو سہی، اب تک اس منصوبے کے تحت ہمارے سامنے کیا کیا کام آیا:
وقت کا سفر۔ محمد علی مکی
قطعہ کلامی۔ محمد علی مکی
مونٹی کرسٹو کا نواب ۔ عمار ابنِ ضیاء
تجدید و احیائے دین۔ ابوشامل
پطرس کے مضامین۔ نعمان علی
ترکش۔ شعیب خالق بلوچ
ماحولیات اور انسان۔ محمد اسد اللہ

جب کہ اطلاعات کے مطابق ان کتابوں پر کام جاری ہے:
1۔کشف المحجوب۔ صلہ عمر
2۔ سائنس دان کا اغوا۔ عمار ابنِ ضیاء
3۔ تین بندوقچی۔ عمار ابنِ ضیاء

چلیں ذرا ایک بار پھر کمر کس لیں اور میدان میں کودنے کے لیے تیار ہوجائیں۔ جو بلاگرز دوست ٹھنڈے ہوکر بیٹھے ہیں، ان سے گزارش ہے کہ جلد کسی کتاب کو برقیانے کا کام شروع کریں تاکہ اردو میں موجود ادبی مواد کو آن لائن محفوظ کیا جاسکے۔

9 تبصرے:

  1. مسئلہ دراصل یہ تھا کہ آپ نے مہم کا نام رکھا “ایک بلاگر-ایک کتاب”۔ اب جنہوں نے ایک کتاب پر کام کر لیا، وہ سکون سے بیٹھ گئے کہ جناب آگے کچھ نہیں کرنا۔
    کچھ کتب میرے پاس بھی زیر تکمیل ہیں۔ ہو سکا تو جلد پیش کروں گا۔

  2. میں نے چند ایک مکمل، کاپی رائٹس فری کتابیں اردو لائبریری پر پوسٹ کر رکھی ہیں، جیسے منٹو کی سیاہ حاشیے، احمد ندیم قاسمی کے مضامین کی ایک کتاب اور ایک آدھ شاعری کے انتخاب کی کتاب لیکن افسوس کہ میں‌انکی ایک ای-بُک بنا کر کہیں اپ لوڈ نہیں کر سکا کچھ وقت ملتا ہے تو انشاءاللہ کر گزرونگا۔

  3. جی، کام جاری ہے کشف المحجوب پر، میرے پاس تقریباً چار نئی اقساط کمپوز ہوئی پڑی ہیں، صرف سستی اور کچھ مصروفیت آڑے آ رہی ہے۔ ۴۵۰ صفحات میں سے تقریباً ۱۳۰ مکمل ہو چکے ہیں۔
    بس اب تو کچھ نہ کچھ کرنا ہی پڑے گا، ;P

  4. عمار، تم “دستک” کو واقعی بھول گئے ہو۔

    حیدرآبادی، ضرور۔ آپ بھی اگر کوئی کتاب لکھنا چاہیں تو لکھ سکتے ہیں۔ منظر نامہ اور اپنے بلاگ پر اس کتاب کی اطلاع ضرور دے دیجیے گا، جو آپ لکھیں گے۔

    نوائے ادب، بھئی، آپ نے اتنے ربط بدلے ہیں، میں تو لسٹ اپڈیٹ کر کر کے ہی تھک جاتی ہوں۔ امید ہے یہ ربط آخری ہو گا۔
    مہم برائے ایک بلاگر اور ایک کتاب کے بارے میں آپ دئیے گئے لنک پر تفصیل دیکھ سکتے ہیں۔ جس میں اردو بلاگر کو اردو کتاب برقیانا ہوتا ہے۔
    http://www.manzarnamah.com/muhim-eik-blogger-eik-kitab/

اپنا تبصرہ تحریر کریں

اوپر