ہفتہ رمضان

Ramadan Kareem ...
Image by Omar_MK via Flickr

ماہ رمضان کا با برکت مہینہ ہم سے الوداع ہونے والا ہے ۔ امریکہ میں صرف دو مزید طاق راتیں رہ گئی ہیں جبکہ ایک تو آج رات ہی ہے اسی وجہ سے سوچا کہ بلاگ پر لکھ کر تمام لوگوں کو رمضان کے حوالے سے بلاگ کرنے کا کہہ کر نیکی کو اجتماعی بنا لیا جائے۔ ہفتہ بلاگستان کی بے پناہ کامیابی کے بعد مجھ سمیت بہت سے لوگوں کو اب خوش گمانی ہے کہ ایسے کئی اور ہفتہ اچھے طریقے سے منائے جا سکیں گے اور اس کے لیے اعلانات اور تبصروں کے لیے منظر نامہ سے بہتر اور کوئی جگہ کیا ہو سکتی ہے۔ میرے ذہن میں رمضان کے آخری ہفتہ کے حوالے سے جو تجاویز ہیں وہ میں آپ سب سے شئیر کر لیتا ہوں تاکہ سب کو لکھنے کے لیے چند موضوعات پہلی نظر میں ہی مل جائیں۔ اس کے علاوہ بھی اگر کوئی اور موضوع ہوں تو وہ آپ لوگ تبصروں میں لکھ دیں تاکہ اس ہفتہ میں موضوعات کو متنوع اور جامع بنایا جا سکے۔ چند موضوعات مندرجہ ذیل ہیں

یوم قرآن ١
یوم قرآن ٢
یوم سیرت نبوی
یوم حدیث
یوم تفسیر
یوم اسلامی تاریخ
یوم صحابہ و صحابیات
یوم خلفاء
یوم کتب اسلامی تاریخ
یوم مسلم مفکرین

Enhanced by Zemanta

12 تبصرے:

  1. مولوی اوہ میرا مطلب ہے علوی صاحب آپ نے خود تو نکل لینا ہے اُشکل چھوڑ کر :hunh: ویسے آئیڈیا بہت اچھا ہے لیکن کچھ دیر سے آیا ہے اور دوجا یہ کہ اگر صرف دینی معلومات پر مبنی عنوانات ہوں گے تولوگوں کی دلچسپی برقرار رکھنا مشکل ہوگی۔ ہونا یہ چاہئے کہ تمام سال کے لئے کوئی دس بارہ عنوانات منتخب کر لئے جائیں اور پھر ان کی فہرست شائع کردی جائے۔ ہر عنوان پر لکھنے کے لئے ایک ماہ دیا جائے ۔ ماہ رمضان میں عنوانات ہفتہ وار بھی کئے جاسکتے ہیں یا مخصوص دنوں کے حساب سے تعداد میں اضافہ کیا جاسکتا ہے وغیرہ وغیرہ۔ کیا خیال ہے؟ 🙂

  2. بہت اچھی بات ہے، لیکن یہ شاید نیک و پرہیز گار لوگوں کے لیے ہے۔ اس لیے ہماری طرف سے معذرت۔ ہاں اگر افطار کا بندوبست ہوتو ااطلاع کر دینا۔
    :haha:

  3. خرم ، ازلی سستی اور تاخیر پسندی بھی کسی شے کا نام ہے کہ نہیں. :haha:

    لوگوں کی دلچسپی اگر کسی موضوع پر نہیں ہے تو وہ بندہ نہ لکھے ، کوئی زبردستی تھوڑی ہے ;P ویسے رمضان میں سارے ہی نیک ہوئے ہوتے ہیں یا کم از کم نیکی کی بات توجہ سے سنتے ہیں. دوسرا میں کونسا ہزار رکعات پڑھوا رہا ہوں چند پوسٹس کرنے کا کہہ رہا ہوں وہ بھی جو جتنے الفاظ کی کرنا چاہے اس کا حق ہے ، کم از کم الفاظ کی کوئی حد نہیں جیسے کہ امتحانی پرچوں میں کم از کم چار سو الفاظ کی حد ہوتی ہے.

    میں اصل میں صرف پوسٹ کرنے کا کہہ رہا ہوں ، علمی مضمون نہیں. آپ ایک آیت کا ترجمہ اور انتہائی مختصر تفسیر بھی پوسٹ کر سکتے ہیں کسی بھی تفسیر سے دیکھ کر. اسی طرح دو چار احادیث.

    اسی طرح سیرت کا کوئی واقعہ چاہے اپنے بچوں کی کتابوں سے دیکھ کر پوسٹ کر دیں کوئی مضائقہ نہیں 😀

  4. نہیں نبیل یہ ہم عاصیوں کے لیے ہے تاکہ چند پوسٹس کرکے شہیدوں میں نام لکھوا لیں

    فائدہ یہ ہوگا کہ جو جوپڑھتا جائے گا وہ ثواب بخشتا جائے گا اور صدقہ جاریہ کا ایک آسان سلسلہ شروع ہو جائے گا بغیر پل و سرائے بنائے 😉

    افطاری کا بندوبست نور مسجد میں کیا ہے مگر اب اتنی دور سے تمہیں کیسے کرواؤں ، اچھا تمہارے حصہ کی افطاری کسی اور کو کروا دوں گا 😀

  5. “مولوی صاحب”! آپ نے کچھ دیر لگا دی ہے۔ اب تو رمضان ختم ہونے میں ایک ہفتہ بھی نہیں رہا۔ اگر وسط رمضان میں یہ منصوبہ شروع کرتے تو شاید کچھ اچھی پیشرفت ہوجاتی۔ فی الوقت تو ممکن نہیں دکھائی دیتا۔

  6. راشد یہ پروگرام ہفتہ بلاگستان کی طرح طویل نہیں ہے اور مختصر مختصر پوسٹس سے کام چلایا جا سکتا ہے.

    قتل نہیں شہید کروانے کا اراد ہے 🙂

  7. زبردست ابو شامل ،

    بہت لطف آیا اس جواب کا اور جب کبھی ایسا عمدہ جواب آئے تو انسان کو اخلاقا لا جواب ہونا ہی چاہیے 🙂

    سو ہم بھی “لاجواب” ہیں

اپنا تبصرہ تحریر کریں

اوپر