آپ یہاں ہیں
صفحہ اول > اردو بلاگنگ ایوارڈز > منظرنامہ ایوارڈز 2013: آغاز و نامزدگیاں

منظرنامہ ایوارڈز 2013: آغاز و نامزدگیاں

ایک طویل عرصہ بعد یعنی 2009 کے بعد اور منظرنامہ کے دوبارہ فعال ہونے کے بعد اس سال یعنی 2013 کو گزشتہ سال 2008 اور 2009 کی طرح منظرنامہ ایوارڈز کا آغاز کیا جارہا ہے۔ منظرنامہ انتظامیہ کی کوشش ہوگی کہ ایوارڈز کا سلسلہ ہر سال جاری رکھا جائے اور اس میں مزید بہتری کی گنجائش پیدا کی جائے۔ منظرنامہ ایوارڈز کا فارمیٹ گزشتہ سال کے ایوارڈز جیسا ہی ہوگا۔ اگر آپ بھول چکے ہیں تو ہم پہلے یاد کروادیتے ہیں :)۔

منظرنامہ ایوارڈز 2013 کا آغاز اس تحریر کے شائع ہونے کے ساتھ ہی کردیا گیا ہے۔ طریقہ کار کچھ اس طرح ہے کہ آپ سال 2013 میں اردو بلاگنگ میں ہونے والی تمام سرگرمیوں پر نظر ڈالیں اور جو بلاگ آپ کی نظر میں منظرنامہ ایوارڈز کے نیچے دیئے گئے زمرہ میں پورا اترتے ہوں انہیں نامزد کردیں۔ منظرنامہ انتظامیہ کا فیصلہ ہے کہ اس سال بھی ایوارڈز صرف 3 ہی رکھے جائیں اور وہ ایوارڈز یہ ہوں گے۔اس کے علاوہ ایک سپیشل ایوارڈز بھی شامل ہوگا۔

1۔ سال 2013 کا بہترین بلاگ

2۔ سال 2013 کا فعال ترین بلاگ

3۔سال 2013 کا بہترین نیا بلاگ

آپ زیادہ سے زیادہ فی ایوارڈ تین نام نامزد کرسکتے ہیں۔ آپ کی جانب سے جو نام زیادہ نامزد ہوں گے تو ان کو ووٹنگ کے لیئے منتخب کیا جائے گا اور زیادہ ووٹ حاصل کرنے والے بلاگر کو ایوارڈ کا حق دار قرار دیا جائے گا۔

یہ منظرنامہ ایوارڈز 2013 کا پہلا مرحلہ ہے اس کے بعد ووٹنگ کا آغاز کیا جائے گا۔

تو جلدی کریں اور اپنے پسندیدہ اردو بلاگرز کے نام نامزد کریں۔

نامزدگیاں جمع کروانے کی آخری تاریخ 10 دسمبر 2013 ہے۔

نامزدگیاں جمع کروانے کے لیئے یہاں کلک کریں۔

ہمیں امید ہے کہ آپ کا بھرپور تعاون ہمارے ساتھ شامل رہے گا اور آپ منظرنامہ ایوارڈز 2013 کا کامیاب بنانے میں انتظامیہ کا ساتھ دیں گے۔

اپڈیٹ:

نامزدگیاں جمع کروانے کی آخری تاریخ 7 دسمبر 2013 سے بڑھا کر 10 دسمبر 2013 کردی گئی ہے۔

محمد بلال خان
محمد بلال خان کمپیوٹر سائنس کے طالب علم ہیں۔پیشے کے لحاظ سے ویب ڈویلپر ہیں۔ عام موضوعات کے علاوہ ٹیکنالوجی اور انٹرنیٹ سے متعلق سافٹ ویئر کے بارے میں بلاگ نامہ کے عنوان سے اردو بلاگ لکھتے ہیں۔ منظرنامہ انتظامیہ کا حصہ ہیں۔
http://www.mbilalkhan.pk/blog

31 تبصرے:

  1. میرے خیال سے جن بنیادوں پر کئی سال قبل ایوارڈ دئے گئے تھے وہ آج کی اردو بلاگنگ کے لئے بالکل بھی مناسب نہیں ہیں، وہ ابتدائی دور تھا جبکہ اب اردو بلاگنگ کافی ترقی کرچکی ہے۔ اس لئے کیٹیگری بھی موضوعاتی ہی ہونے چاہئے تھے، جیسے بہترین علاقائی بلاگ، بہترین کھیلوں کا بلاگ، بہترین سیاسی بلاگ، بہترین سماجی بلاگ وغیرہ وغیرہ۔۔۔ بہرحال اب تو آپ حضرات رائے بناچکے ہیں۔

    1. منظرنامہ کی فعالیت کے بعد یہ انتظامیہ کا پہلا تجربہ ہے اس لیئے اس سال نہیں آئندہ سال کے ایوارڈز میں تبدیلی لائیں گے اور گزرتے سالوں کے ساتھ مزید سے مزید بہتر بنائیں گے۔ ہماری تو یہ بھی کوشش ہے کہ ایوارڈز کی آنے والے وقتوں میں باقائدہ تقریب بھی ہو اور اس کے لیئے پرامید ہیں۔ آپ سے گزارش ہے کہ نامزدگی کرکے اپنا حق ادا کریں 🙂 ۔

  2. کاشف نصیر بھائی نے اچھی تجاویز دی ہیں اور بلال بھائی کی بات سے بھی اتفاق ہے۔ یہاں تو کوئی کسی کے لئے دو لفظ بھی تعریف کے نہیں بولتا۔ ان ایوارڈز سے نئے بلاگرز کی حوصلہ افزائی کے ساتھ ساتھ پرانے لکھنے والوں کو بھی اچھی سے اچھی تحاریر لکھنے کی طرف راغب کیا جاسکے گا۔ بلاگستان نے بھی اچھی بلاگ پوسٹ کے لئے ہفتہ وار ایوارڈ دینے کا سلسلہ شروع کیا تھا۔ اب منظر نامہ کے پلیٹ فارم سے ایوارڈز کا سلسلہ دوبارہ جاری کرنے کا ارادہ بہت خوش آئند ہے۔

  3. سلسلہ تو خیر شروع ہو چکا ہے، مگر میں ایک دو باتیں شیئر کرنا چاہتا ہوں۔۔۔

    میرے محکمے میں (میرا مطلب کہ جس محکمے میں مَیں نوکری کرتا ہوں) اس طرح کے ایوارڈز دیے جاتے ہیں، جو ماہانہ اور سالانہ بنیادوں پر ہوتے ہیں۔

    تو سوال یہ ہے کہ منظر نامہ کے یہ ایوارڈ کن بنیادوں پر دیے جائیں گے؟
    یا یوں کہیے کہ ان ایوارڈز کا ‘کرائیٹیریا’ کیا ہے؟

    اب ظاہر ہے کہ میں خود تو اس بات کا فیصلہ نہیں کر سکتا کہ میرا بلاگ اچھا ہے یا برا؟ اور نہ ہی میں یہ پسند کروں گا کہ میرے ‘اچھے’ بلاگ کو لوگ نامزد نہ کریں، ہاں مجھے یہ ضرور اچھا لگے گا کہ میرے ‘برے’ بلاگ کو لوگ نامزد کر دیں۔

    اس لیے اس کا ‘کرائیٹیریا’ پہلے طے کر لینا چاہیے تھا، (چلیں اِس بار نہ سہی، مگر اگلی بار کے لیے تیاری کر لیں)۔ تاکہ کوئی غیر معیاری بلاگ نامزد نہ کیا جا سکے۔ مثلاَ
    کتنے لوگوں نے بلاگ دیکھا؟
    کتنی بار بلاگ پڑھا گیا؟
    بلاگ کا پیج رینک کیا ہے؟
    پاکستان میں بلاگ کی رینکنگ کتنی ہے؟
    وغیرہ وغیرہ

    کیونکہ اب ہر روز کوئی نہ کوئی اردو بلاگنگ میں طبع آزمائی کر رہا/رہی ہے تو ان سب کو (مجھ سمیت) پہلی بار ‘منظر نامہ ایوارڈ’ کے بارے میں پتہ چلا ہے، اگر آپ نے یہ کرائیٹیریا بنایا ہوتا تو ہمیں پتہ ہوتا کہ ہمارا بلاگ نامزد کیے جانے کے قابل ہے یا نہیں؟
    اگر نہیں تو محنت کر کے بلاگ کو نامزد کیے جانے کے قابل بناتے، اور اگر پہلے سے ہی قابل یے تو اس کے معیار کو مزید بہتر بناتے (گو کہ یہ تحریک پہلے سے ہی ہر بلاگر میں ہائی جاتی ہے)

    اس طرح (میرے جیسے) کچھ نکمے بلاگرز میں بھی برقی رو دوڑ جائے گی۔

    کاشف بھائی کی تجویز برائے کیٹیگری نہایت مناسب ہے۔ بلاگ کے موضوع کو بھی مد نظر رکھنا چاہیے۔

    اس کے علاوہ ‘پوسٹ آف دی ویک’ یا ‘پوسٹ آپ دی منتھ’ کے جیسا کوئی سلسلہ بھی شروع کریں۔

  4. ہاں ایک بات تو رہ ہی گئی،

    ایک بار ایوارڈ جیت لینے کے بعد، اگلے ایوارڈ کے لیے اس بلاگ کو نامزد نہ کیا جائے، صرف اُس کیٹیگری کے لیے جس کیٹیگری کا ایوارڈ اس بلاگ نے حاصل کیا ہو۔

    کیا یہ تجویز قابلِ غور ہے؟

    (ویسے میں بھی 50 50 ہوں اس معاملے میں کیونکہ ایک سال دورانیہ کی بات ہے ناں)۔

  5. ہم کاشف نصیر صاحب کی تجویز سے متفق ہیں۔ ویسے ایوارڈز کیلیے پچھلے سال کا طریقہ کار جاری رکھنے کا کوئی تک نہیں بنتا۔ ہم افتخار اجمل صاحب کی شکایت سے اتفاق کرتے ہیں۔ ایوارڈز کا یہ طریقہ شفاف نہیں ہے اور ایوارڈز غلط لوگوں کو ملنا کوئی مشکل نہیں ہو گا۔
    وسیم مغل صاحب کی تجویز بھی ایوارڈز کے مرحلے کی شفافیت کیلیے بری نہیں ہے۔

    1. آپ کے اور باقی تمام دوستوں کے مشورے منظرنامہ کے لیئے بہت اہم ہیں اس بار ایوارڈز کا مقصد ہی یہی تھا کہ نئی انتظامیہ کو تجربہ ہوجائے ساتھ ہی آئندہ ایوارڈز کے لیئے مزید سے مزید تجاویز نوٹ کرلی جائیں اور منظرنامہ ایوارڈز کے سلسلے کو بہتر بہتر بنایا جاسکے۔

اپنا تبصرہ تحریر کریں

اوپر